Smuggling in Neelum Valley at it's Peak


نیلم ویلی وسائل کی جنگ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


نیلم ویلی خوبصورتی کی وجہ سے پورے پاکستان بلکہ ایشیا میں ایک منفرد مقام رکھتا ہے۔ حالیہ دنوں میں محکمہ جنگلات اور جڑی بوٹی مافیہ بہت زیادہ مصروف امل ہے۔ اہل علاقہ میں سے بہت سے لوگوں نے اس معاملہ کہ ہر مقام پر اجاگر کیا ہے۔ لیکن ہر کوشش بے سود کیونکہ پنجابی زبان میں کہتے ہیں کتی چوراں نل رل گیئ ہے۔

اس بات کا اظہار وہاں کے کچھ نمایاں لوگوں نے کیا جن میں وہاں کے امیرالدیں مغل ہیں جو کہ سماء نیوز کے سا تھ وابستہ ہیں اور ایک اچھے صحافی بھی ہیں۔ یہاں سوال یہ اٹھتا ہے کہ کیا مقامی لوگوں کے مسایل صرف وہاں کے صحافیوں نے ہی اٹھانے ہیں؟ ووٹ کا لالچ دے کر لوگوں کو زلیل کرنے والے اس طرح کی صورت حال میں غایب نظر آتے ہیں۔ 

آمیر الدیں مغل نے اپنے خیالات کا اظہار اپنے نجی سماجی اکاونٹ پہ کچھ اس طرح سے کیا ہے۔


"10محرم کےبعدوادی نیلم کے قدرتی وسائل لوٹنے والوں کے خلاف قلم اور کیمرے کے زریعہ طبل جنگ بجایا جائے گا۔میڈیا مظاہرے تو نہیں کر سکتا"

ایک اور پیغام میں لکھتے ہیں۔

"وادی نیلم کےعوام پوچھتے ہیں کہ محکمہ جنگلات قدرتی وسائل کے تحفظ کیلئے یاقدرتی وسائل لوٹنے والوں کے تحفظ کیلئے"

ایک اور پیغام میں لکھتے ہیں۔

"رہبرکےروپ میں چھپے رہزنوں،چورو،لٹیروں کے خلاف جنگ اگراب نہیں تو پھر کبھی نہیں اٹھو نیلم کے جوانوں وادی کے وسائل کے تحفظ کیلئے۔"

امیرالدین مغل کی اس کاوش کو ہم سلام پیش کرتے ہیں اور ہم انکا ہر ممکن تعاون کرنے کے لیں تیاربھی ہیں۔ ایک اور جگہ فرماتے ہیں۔

"وادی نیلم میں محکمہ جنگلات کے اہلکاروں کے خلاف کون کاروائی کرے گا جنہوں نے جڑی بوٹی سمگل کرنے والے پانچ ٹرک چھوڑنے کا جرم کیا ہے۔"

اور

"وادی نیلم کی سول سوسائٹی وادی کے قدرتی وسائل کی لوٹ مار کے خلاف متحد ہو کر سڑکوں پر نکلے نہیں تو چورسب کچھ لوٹ کر لیجائیں گے۔"

ایک اور جگہ سیاسی قیادتوں کو نشانہ بناتےہوئے۔۔۔۔۔

"وادی نیلم سے جڑی بوٹی سمگل کرنے کیلئے PTIاورPMLمتحد سمگلنگ میں استعمال ہونے والے ٹرک پی ٹی آئی رہنما کے چھڑانے والےPMLNوالے"

اور

"وادی نیلم میں پکڑی جانے والی جڑی بوٹیاں میں قیمتی پتھر بھی ہیں جو میں نے بڑی محنت سے جمع کئے۔خانہ بدوش خاتون #قیمتی پتھر کدھر ہیں

اور

"وادی نیلم جن ٹرکوں کے زریعہ جڑی بوٹی سمگل کی جا رہی تھی وہ بااثر لوگوں کے تھے پولیس اور جنگلات والے ساز باز کر گئے#مافیامردہ باد"

اور

"وادی نیلم میں جن ٹرکوں سے جڑی بوٹی پکڑی گئی ان کو کس قانون کے تحت چھوڑا گیا۔دفعہ28کہاں ہے ملی بھگت مردہ باد"

اور

"وادی نیلم سے خانہ بدوشوں کے ٹرکوں بھاری مقدار میں جڑی بوٹی پکڑ لی پولیس، جنگلات کے اہلکاروں نے کافی مقدار غائب کردی۔چوروں پے مور"

اس صورتحال میں وہاں کی مقامی قیادت کو شرم سے ڈوب کے مر جانا چاہیے، وہاں کے مقامی لوگ پہلے سے ہی وہاں کے سیاسی گٹھ جوڑ سے تنگ ہیں۔۔۔۔۔۔